Thursday, June 13

پاکستان کی معیشت کو دوبارہ فعال بنانے کے لیے ورلڈ بینک اور پائِیڈ  انقلابی اصلاحات کے آغاز کے لئے ملکر کوششیں کرنے کا اعادہ کردیا

The joint initiative between the World Bank Group (Pakistan) and the Pakistan Institute of Economic Development (PIDE) has been successfully completed, bringing together a group of stakeholders committed to the economic development of Pakistan. This important meeting, organized to support the country's new economic development program for the next five years, was marked by many discussions and a determination to share practical reforms. Dr. These measures were seen as a solution to the problem of Pakistan needing more foreign aid, as seen in the IMF report that more than $120 billion is needed in the next five years. Dr. Haque reform plan covers key sectors including legal reforms, tax reforms, market liberalisation, energy efficiency, and agriculture and banking development. A key feature of the reforms was the introduction of the 'Regulatory Guillotine, which aimed to eliminate burdensome regulations that inhibit business growth and innovation. These reforms aim to modernize Pakistan national economy, facilitate a business-friendly environment, improve export policies, improve import regulations and increase overall productivity. The aim is to move Pakistan towards sustainable economic growth and development by encouraging investment, creating employment and increasing GDP growth. World Bank Regional Director (South Asia) Mathew Verghis, in his speech on "Reforms for a Better Future: Time to Decide", said that Pakistan's economy cannot survive as it is dependent on the budget and the increasing debt level with deficit financing in the current account. Up to 80% of GDP. He added that Pakistan's expenditure exceeds its income and the country imports more than it exports, leading to increased domestic and external borrowing. However, he stated that Pakistan has a bright future potential that is expected to achieve 7-8% annual gross domestic product by utilizing its youth, natural resources and lands, and emphasized that economic reforms should be given priority. . What is the situation today? PIDE Joint Director Dr. Durre Nayab spoke on the subject of  Public Administration in the 21st Century. Citing inefficiencies in Pakistan's governance system, he called for sweeping reforms in various departments, including the cabinet, civil service, judiciary and local government. This demonstrates the need to reduce the size of the cabinet, reduce the size of the political structure and strengthen the skills and efficiency of the management role. The reforms aim to streamline and simplify public administration by eliminating outdated procedures, creating competitive hiring, digital operations and giving local governments more autonomy. Additionally, the debate calls for reforming ministries and private institutions to create transparency, transparency and efficiency in the delivery of public services, bringing them in line with modern governance standards and promoting effective and efficient methods of management. Mr. Derek HC Chen, World Bank Economist, provides a comprehensive overview of Pakistan's tax system with the aim of making the tax system more modern and efficient. The need for major reforms is discussed due to Pakistan's low income by international standards and the complexity of the current tax system, which is characterized by arbitrary provisions and interest rates. The overview provides a detailed analysis of specific taxes, such as sales tax, income tax and corporate income tax, highlighting inefficiencies and tax expansion potential. The main proposals include rationalization, more taxes and better governance policies, and the use of funds from the provinces. This chapter highlights the vital role of systematic and progressive reforms to increase tax efficiency, support fiscal spending and promote economic equality. Economic research expert Dr. Ahmad Waqar Qasim is highly critical of the current legal framework in Pakistan. He points out that this is a major impediment to economic activity due to the complexity and difficult nature of obtaining permits. It poses a burden that is seen as an 'invisible tax' that suppresses economic activity at all levels. This evaluation highlights the need for a “Regulatory Guillotine,” which has been successful in different countries, to simplify regulation by eliminating unnecessary licenses and simplifying the process through the management system. It is argued that this approach is important in encouraging investment, making markets more efficient and reducing the bureaucratic appetite for over-regulation. The debate also calls for new regulations to be presented with a clear benefit analysis, and for a formal impact analysis (RIA) to be implemented to promote transparency and accountability in the regulatory process. In general, the document states that drastic measures should be taken to remove obstacles to economic growth and investment in Pakistan. Ms. Maliha Haider, education expert at the World Bank, highlighted the significant progress made in Pakistan's education system, including the expansion of free and compulsory education and the introduction of new reforms such as merit-based teacher recruitment and public-private partnerships. . Despite these efforts, Pakistan still faces significant challenges due to low education funding compared to South Asia, contributing to school dropout and learning poverty. Document , titled 'Use better, spend more: How to calculate education expenditure for Pakistani children', provides a comprehensive reform plan aimed at improving the efficiency of government spending on education to improve children's learning outcomes. It emphasizes the need to increase incomes to 4.3% of GDP to increase efficiency, equity, governance, coordination and greater participation of parents and civil society. The proposed reforms aim to address the shortcomings of and are underpinned by an evidence-based approach that will deliver lasting benefits and provide the basis for continuous improvement in the education sector. As the discussion concluded, participants expressed confidence in the adoption and implementation of the proposed reforms and the positive impacts they are expected to have on the Pakistani economy. Editor: Kamran Raja

پاکستان کی معیشت کو دوبارہ فعال بنانے کے لیے ورلڈ بینک اور پائِیڈ  انقلابی اصلاحات کے آغاز کے لئے ملکر کوششیں کرنے کا اعادہ کردیا

ورلڈ بینک اور پاکستان انسٹیٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس (پی آئی ڈی ای) کے درمیان مشترکہ تقریب کامیابی سے اختتام پذیر ہوئی، جس میں پاکستان کے اقتصادی مستقبل کی تشکیل میں دلچسپی رکھنے والے مختلف فریقین کو اکٹھا کیا گیا۔ یہ نمایاں اجتماع، جو ملک کے نئے اقتصادی ترقیاتی ایجنڈے کی حمایت میں ڈیزائن کیا گیا تھا اور اگلے پانچ سالوں میں نافذ العمل ہوگا، جامع بحثوں اور عملی اصلاحات کے مشترکہ عزم کی نشاندہی کی گئی۔

ڈاکٹر ندیم الحق، وائس چانسلر پاکستان انسٹیٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس (پی آئی ڈی ای)، نے فوری اصلاحی ایجنڈا – آئی ایم ایف اور اس سے آگے” کے عنوان سے ایک اہم اقتصادی اصلاحی پہلو پر بات چیت کا آغاز کیا۔ یوں پروگرام کا آغاز ان کے افتتاحی خطاب سے ہوا۔ ان کا کہنا تھا کہ  یہ حکمت عملی پاکستان کی جانب سے شدید بیرونی مالی معاونت کی ضرورت کے جواب میں سامنے آئی، جیسا کہ ایک آئی ایم ایف کی رپورٹ نے اشارہ کیا، جس میں اگلے پانچ سالوں میں ۱۲۰ ارب ڈالر سے زائد کی ضرورت ہے۔ ڈاکٹر حق کا جامع اصلاحی ایجنڈا ضروری شعبوں جیسے کہ ریگولیٹری جدید کاری، ٹیکس اصلاحات، مارکیٹ لبرلائزیشن، توانائی کی کارکردگی اور زراعت اور بینکاری میں بہتریوں کو مدِ نظر رکھتا ہے۔ اصلاحات کی ایک اہم خصوصیت ‘ریگولیٹری گیلوٹائن’ کا تعارف ہے، جس کا مقصد کاروباری نمو اور اختراع کو روکنے والے بوجھل قوانین کو ختم کرنا ہے۔ یہ اصلاحات پاکستان کے معاشی منظرنامے کو تروتازہ کرنے، کاروبار دوست ماحول کو فروغ دینے، برآمدی حکمت عملیوں کو بہتر بنانے، درآمدی قوانین کو بہتر بنانے اور مجموعی طور پر شعبہ جاتی کارکردگی کو بہتر بنانے کے لئے ڈیزائن کی گئی ہیں۔ مقصد سرمایہ کاری کو متحرک کرنا، ملازمتیں پیدا کرنا اور زیادہ جی ڈی پی نمو کو فروغ دینا ہے، جس سے پاکستان کو طویل مدتی معاشی استحکام اور خوشحالی کی طرف گامزن کیا جا سکتا ہے۔

میتھیو ورگیز، ریجنل ڈائریکٹر ورلڈ بینک، نے “روشن مستقبل کے لیے اصلاحات: فیصلہ کرنے کا وقت” پر بات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کا اقتصادی ماڈل پائیدار نہیں ہے کیونکہ اس کا انحصار اپنے مالی اور جاری اکاؤنٹ خسارے کو فنانس کرنے کے لئے قرض پر ہے، جس سے قرض کی سطح بڑھتی جا رہی ہے اور یہ جی ڈی پی کا ۸۰% ہو گئی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کے اخراجات اس کی آمدنی سے زیادہ ہیں، اور وہ اپنی برآمدات سے زیادہ درآمدات کرتا ہے، جس کی وجہ سے گھریلو اور بیرونی قرض میں اضافہ ہوتا ہے۔ تاہم، انہوں نے یہ بھی نوٹ کیا کہ پاکستان کے پاس روشن مستقبل کی صلاحیت موجود ہے، اس کی نوجوان آبادی، قدرتی وسائل، اور جغرافیائی حیثیت کا فائدہ اٹھا کر ۷ سے ۸% سالانہ جی ڈی پی کی نمو حاصل کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے، اور انہوں نے موجودہ اقتصادی بحران سے نمٹنے کے لئے اصلاحات کی ضرورت پر زور دیا۔

ڈاکٹر دُرّہ نایاب، جوائنٹ ڈائریکٹر، پی آئی ڈی ای، نے “۲۱ویں صدی کی عوامی انتظامیہ” کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے پاکستان کے گورننس سسٹم میں نمایاں خامیوں کو اجاگر کیا، مختلف شعبوں میں جامع اصلاحات کی تجویز پیش کی، جن میں کابینہ، سول بیوروکریسی، عدلیہ، اور مقامی حکومت شامل ہیں۔ اس نے وفاقی کابینہ کے سائز کو کم کرنے، سیاسی تقرریوں کو محدود کرنے، اور گورننس کرداروں میں مہارت اور کارکردگی پر زور دینے کی ضرورت کو اجاگر کیا۔ اصلاحات کا مقصد عوامی انتظامیہ کو پیشہ ورانہ بنانا اور اسے بہتر بنانا ہے، پرانی پریکٹسز کو ختم کرکے، مقابلہ بردار بھرتی کے عمل کو متعارف کرانا، آپریشنز کو ڈیجیٹل بنانا، اور مقامی حکومت کی سطح پر زیادہ خود مختاری کو فعال بنانا شامل ہے۔ اس کے علاوہ، پیشکش میں وزارتوں اور خود مختار ایجنسیوں کی دوبارہ تشکیل کا مطالبہ کیا گیا ہے تاکہ شفافیت، جوابدہی، اور عوامی خدمت کی فراہمی میں مؤثریت کو بڑھایا جا سکے، اس طرح جدید گورننس کے معیارات کے مطابق اور ایک زیادہ جوابی اور مؤثر انتظامی ڈھانچہ کو فروغ دیا جا سکے۔

مسٹر ڈیرک ایچ سی چین، سینئر اکانومسٹ ورلڈ بینک، نے پاکستان کے فیڈرل ٹیکس سسٹم کا جامع جائزہ پیش کیا، جس کا مقصد جدید اور موثر ٹیکس ڈھانچہ فراہم کرنا ہے۔ اس میں بین الاقوامی معیارات کے مقابلے میں پاکستان کی کم ریونیو کلیکشن اور موجودہ ٹیکس سسٹم کی پیچیدگیوں کی وجہ سے اہم اصلاحات کی ضرورت پر بحث کی گئی، جس میں بہت سے خصوصی پروویژنز اور مراعاتی شرحیں شامل ہیں۔ جائزہ میں خاص ٹیکسز جیسے کہ سیلز ٹیکس، ذاتی آمدنی ٹیکس، اور کارپوریٹ آمدنی ٹیکس کا تفصیلی تجزیہ فراہم کیا گیا، جس میں ناکارہیاں اور ٹیکس بیس کو وسیع کرنے کی صلاحیت کو ظاہر کیا گیا۔ اہم تجاویز میں مراعات کی تنظیم نو، ٹیکس پالیسی اور انتظامیہ کو بہتر بنانا، اور صوبائی ذرائع سے ممکنہ آمدنی کا استفادہ شامل ہیں۔ باب میں ٹیکس کلیکشن کی کارکردگی کو بڑھانے، مالی استحکام کی حمایت کرنے، اور مساوی اقتصادی نمو کو یقینی بنانے کے لئے نظامی اور مرحلہ وار اصلاحات کے اہم کردار پر زور دیا گیا۔

ڈاکٹر احمد وقار قاسم، سینئر ریسرچ اکانومسٹ، پی آئی ڈی ای، نے پاکستان کے موجودہ ریگولیٹری فریم ورک کا وسیع تنقیدی جائزہ پیش کیا، جسے اقتصادی سرگرمیوں کے لئے ایک اہم رکاوٹ کے طور پر اجاگر کیا گیا کیونکہ اس کی پیچیدگی اور اجازتوں کے حصول کی مشکل نوعیت ہے۔ اس نے وسیع ریگولیٹری بوجھ کو ایک ‘نادیدہ ٹیکس’ کے طور پر شناخت کیا، جو تمام شعبوں میں معاشی پہلووں کو دبا دیتا ہے۔ جائزہ میں ‘ریگولیٹری گیلوٹائن’ کے طریقہ کار کی ضرورت کو اجاگر کیا گیا، جو مختلف ممالک میں کامیاب رہا ہے، تاکہ ضروری نہ ہونے والی اجازتوں کو ختم کرکے اور ڈیجیٹل گورننس کے ذریعے عمل کو آسان بنا کر ریگولیشنز کو بہتر بنایا جا سکے۔ اس طریقہ کار کو سرمایہ کاری کو فروغ دینے، مؤثر مارکیٹوں کو قائم کرنے، اور بیوروکریٹک رجحان کو زیادہ کنٹرول سے کم کرنے کے لئے ضروری سمجھا جاتا ہے۔ پیشکش میں باقاعدہ ریگولیٹری امپیکٹ تجزیات (RIA) کے نفاذ کی بھی کال دی گئی ہے تاکہ نئے قوانین کو واضح لاگت-فائدہ تجزیات سے جواز پیش کیا جا سکے، اس طرح ریگولیٹری عملوں میں شفافیت اور جوابدہی کو فروغ دیا جا سکے۔ مجموعی طور پر، دستاویز پاکستان میں معاشی نمو اور سرمایہ کاری کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنے کے لئے اہم ڈیریگولیشن کے لئے دلائل پیش کرتی ہے۔

محترمہ مالیحہ حیدر، تعلیمی ماہر ورلڈ بینک، نے پاکستان کے تعلیمی نظام میں اہم پیشرفتوں کی نمائش کی، جن میں مفت اور لازمی تعلیم تک رسائی کو وسیع کرنا اور میرٹ پر مبنی اساتذہ کی بھرتی اور پبلک-پرائیویٹ شراکت داریوں جیسی جدت طرازی اصلاحات کا تعارف شامل ہیں۔ اس کے باوجود، پاکستان اب بھی جنوبی ایشیا کے مقابلے میں اپنی کم تعلیمی اخراجات کی وجہ سے نمایاں چیلنجوں کا سامنا کر رہا ہے، جو زیادہ ڈراپ آؤٹ کی شرحوں اور تعلیمی غربت میں اضافہ کرتی ہیں۔ دستاویز میں بچوں کے تعلیمی نتائج کو بہتر بنانے کے لئے عوامی تعلیمی اخراجات کی کارکردگی کو بڑھانے کے لئے جامع اصلاحی ایجنڈا بیان کیا گیا ہے۔ اس میں جی ڈی پی کا کم از کم ۴.۳% تک اخراجات بڑھانے، اخراجات کی کارکردگی، مساوات، انتظام، رابطہ کاری کو بہتر بنانے، اور والدین اور سول سوسائٹی کی زیادہ شمولیت پر زور دیا گیا ہے۔ تجویز کردہ اصلاحات نظامی خامیوں کے خاتمے کے لئے ڈیزائن کی گئی ہیں اور انہیں ثبوت پر مبنی نقطہ نظر کی حمایت حاصل ہے، جو مستقل فوائد اور تعلیمی شعبے میں مسلسل بہتری کی بنیاد فراہم کرتے ہیں۔

مکالمے کے اختتام پر، شرکاء نے تجویز کردہ اصلاحات کے نفاذ اور پاکستان کی معیشت پر ان کے مثبت اثرات کی توقعات کا اظہار کیا۔

 

ایڈیٹر : کامران راجہ