Friday, July 19

وزیر اعظم کی معاون برائے موسمیاتی تبدیلی، گیٹس فاؤنڈیشن کا پاکستان کی موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے مشترکہ طور پر کام کرنے کا عزم

پریس ریلیز وزیر اعظم کی معاون پراءے موسمیاتی تبدیلی، گیٹس فاؤنڈیشن کا پاکستان کی موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے مشترکہ طور پر کام کرنے کا عزم اسلام آ باد،25 جون 2024، اسلام آباد وزارت موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ اور بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن نے پاکستان کی موسمیاتی لچک پیدا کرنے کے لیے مشترکہ طور پر کام کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ یہ اتفاق اسلام آباد میں فاؤنڈیشن کے چیئرمین بل گیٹس ،وزیر اعظم کی کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم کی میزبانی میں ایک اعلیٰ اختیاراتی موسمیاتی موافقت راؤنڈ ٹیبل کے دوران طے پایا۔ گول میز کانفرنس نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کے ہیڈ کوارٹر میں منعقد ہوئی اور اس کی میزبانی این ڈی ایم اے کے چیئرپرسن لیفٹیننٹ جنرل انعام حیدر ملک نے کی۔ وزیر اعظم کی معاون برائے موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم نے بھی بل گیٹس کو موسمیاتی تبدیلی کے مختلف شعبہ جاتی اثرات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی سماجی و اقتصادی ترقی موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے بے حد متاثر ہوئی ہے۔ انہوں نے انہیں خاص طور پر سیلاب، گرمی کی لہروں، جنگلات میں لگنے والی آگ اور خشک سالی کے بارے میں بھی آگاہ کیا جو کہ مختلف سماجی و اقتصادی شعبوں خصوصاً زراعت، پانی، توانائی، صحت اور تعلیم پر اثرات کے لحاظ سے متواتر اور شدید ہو چکے ہیں۔ وزیر اعظم کی معاون خصوصی رومینہ خورشید نے گیٹس کو بتایاکہ پاکستان کاموسمیاتی تبدیلیوں میں کاربن کے اخراج میں سب سے کم حصہ ہے تاہم اس کے باوجود، پاکستان گلوبل وارمنگ کے بدترین اثرات کا سامنا کر رہا ہے اور اس کے اثرات سے نمٹنے کے لیے ہر ممکن کوششیں کر رہا ہے تاکہ ملک کے پسماندہ طبقات کی زندگیوں اور معاش کی حفاظت کی جا سکے۔ انہوں نے گیٹس کے ساتھ اپنی گفتگو کے دوران اس بات کو بھی اجاگر کیا کہ پاکستان عالمی برادری کو عالمی حدت کے مضر اثرات سے بچانے کے لیے ہر سطح پر عالمی ماحولیاتی کارروائی میں تعاون کے لیے پرعزم ہے۔ وزیر اعظم کی معاون رومینہ خوشد عالم نے بھی پاکستانی شراکت داروں کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی شراکت داروں کے درمیان دنیا کے سب سے اہم اجتماعی چیلنج، موسمیاتی تبدیلی پر تعاون اور باہمی تعاون کی راہیں تلاش کرنے کے لیے مسلسل بات چیت کی اہمیت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ گھریلو سرکاری اور نجی شعبے کے دونوں شراکت دارپہلے سے ہی موسمیاتی تخفیف اور موافقت میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں، جو بین الاقوامی شراکت داروں کے درمیان روابط کو مزید فروغ دینے اور گہرا کرنے کی ضرورت کو اجاگر کررہے ہیں۔ بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن کے چیئرمین نے محدود مالی وسائل کے باوجود ملک میں موسمیاتی لچک پیدا کرنے اور تخفیف اور موافقت کے اقدامات کے لیے وزیر اعظم محمد شہباز شریف حکومت کے پالیسی اقدامات کو سراہا۔ تاہم، مسٹر گیٹس نے وزیر اعظم کے موسمیاتی معاون کو اپنی فاؤنڈیشن کے ذریعے موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ کاری کی وزارت کے ساتھ رابطہ میں رہنے کی یقین دہانی کرائی اور زراعت میں ملک کی موسمیاتی لچک کو بڑھانے کے لیے موسمیاتی تبدیلیوں کو کم کرنے اور موافقت کے اقدامات شروع کرنے کے لیے ہر ممکن تکنیکی اور غیر تکنیکی مدد فراہم کرنے اورپانی، توانائی، خوراک، صحت اور تعلیم کے شعبے میں تعاون کا یقین دلایا ۔ دریں اثنا، گول میز کے دوران، گیٹس نے صحت، زراعت، ٹیکنالوجی اور موسمیاتی فنانس کے شعبوں میں نجی شعبے کے اہم اختراع کاروں سے بھی بات چیت کی جنہوں نے ملک کو موسمیاتی تبدیلی کے موافق بنانے کے لیے پاکستان کے نجی شعبے کی مختلف کوششوں پر روشنی ڈالی۔ نجی شعبے کے نمائندوں اور گیٹس نے پاکستان کے مختلف سماجی و اقتصادی شعبوں بالخصوص توانائی، پانی، خوراک، صحت اور تعلیم کو درپیش موسمیاتی تبدیلی کے چیلنجوں پر قابو پانے کے لیے تعاون کے امکانات کا بھی جائزہ لیا۔ گیٹس نے پاکستان کی آب و ہوا کی موافقت کے وسیع طریقوں کے کلیدی پہلوؤں اور موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے پیدا ہونے والے مسائل اور چیلنجوں کے سائنس پر مبنی حل کے ذریعے پیش کردہ مواقع کے بارے میں بھی بات کی۔ گول میز کے دوران، م گیٹس نے دائرہ کار اور پیمانے دونوں کے مسائل کے لیے مصنوعی ذہانت (اے آئی) کے استعمال اور استعمال کی اہمیت کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے ماحولیاتی خطرات سے نمٹنے میں پاکستان کو درپیش غیر معمولی چیلنجوں کابھی اعتراف کیا۔ انہوں نے ملک میں موسمیاتی موافقت کی کوششوں کی حمایت کے لیے اپنے مضبوط عزم کا اعادہ کیا۔ @ThePakistanTimes #Thepakistantimesوزیر اعظم کی معاون برائے موسمیاتی تبدیلی، گیٹس فاؤنڈیشن کا پاکستان کی موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے مشترکہ طور پر کام کرنے کا عزم

اسلام آباد وزارت موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ اور بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن نے پاکستان کی موسمیاتی لچک پیدا کرنے کے لیے مشترکہ طور پر کام کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

یہ اتفاق اسلام آباد میں فاؤنڈیشن کے چیئرمین بل گیٹس ،وزیر اعظم کی کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم کی میزبانی میں ایک اعلیٰ اختیاراتی موسمیاتی موافقت راؤنڈ ٹیبل کے دوران طے پایا۔

گول میز کانفرنس نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کے ہیڈ کوارٹر میں منعقد ہوئی اور اس کی میزبانی این ڈی ایم اے کے چیئرپرسن لیفٹیننٹ جنرل انعام حیدر ملک نے کی۔

وزیر اعظم کی معاون برائے موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم نے بھی بل گیٹس کو موسمیاتی تبدیلی کے مختلف شعبہ جاتی اثرات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی سماجی و اقتصادی ترقی موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے بے حد متاثر ہوئی ہے۔
انہوں نے انہیں خاص طور پر سیلاب، گرمی کی لہروں، جنگلات میں لگنے والی آگ اور خشک سالی کے بارے میں بھی آگاہ کیا جو کہ مختلف سماجی و اقتصادی شعبوں خصوصاً زراعت، پانی، توانائی، صحت اور تعلیم پر اثرات کے لحاظ سے متواتر اور شدید ہو چکے ہیں۔
وزیر اعظم کی معاون خصوصی رومینہ خورشید نے گیٹس کو بتایاکہ پاکستان کاموسمیاتی تبدیلیوں میں کاربن کے اخراج میں سب سے کم حصہ ہے تاہم اس کے باوجود، پاکستان گلوبل وارمنگ کے بدترین اثرات کا سامنا کر رہا ہے اور اس کے اثرات سے نمٹنے کے لیے ہر ممکن کوششیں کر رہا ہے تاکہ ملک کے پسماندہ طبقات کی زندگیوں اور معاش کی حفاظت کی جا سکے۔
انہوں نے گیٹس کے ساتھ اپنی گفتگو کے دوران اس بات کو بھی اجاگر کیا کہ پاکستان عالمی برادری کو عالمی حدت کے مضر اثرات سے بچانے کے لیے ہر سطح پر عالمی ماحولیاتی کارروائی میں تعاون کے لیے پرعزم ہے۔
وزیر اعظم کی معاون رومینہ خوشد عالم نے بھی پاکستانی شراکت داروں کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی شراکت داروں کے درمیان دنیا کے سب سے اہم اجتماعی چیلنج، موسمیاتی تبدیلی پر تعاون اور باہمی تعاون کی راہیں تلاش کرنے کے لیے مسلسل بات چیت کی اہمیت پر زور دیا۔

انہوں نے کہا کہ گھریلو سرکاری اور نجی شعبے کے دونوں شراکت دارپہلے سے ہی موسمیاتی تخفیف اور موافقت میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں، جو بین الاقوامی شراکت داروں کے درمیان روابط کو مزید فروغ دینے اور گہرا کرنے کی ضرورت کو اجاگر کررہے ہیں۔

بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن کے چیئرمین نے محدود مالی وسائل کے باوجود ملک میں موسمیاتی لچک پیدا کرنے اور تخفیف اور موافقت کے اقدامات کے لیے وزیر اعظم محمد شہباز شریف حکومت کے پالیسی اقدامات کو سراہا۔

تاہم، مسٹر گیٹس نے وزیر اعظم کے موسمیاتی معاون کو اپنی فاؤنڈیشن کے ذریعے موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ کاری کی وزارت کے ساتھ رابطہ میں رہنے کی یقین دہانی کرائی اور زراعت میں ملک کی موسمیاتی لچک کو بڑھانے کے لیے موسمیاتی تبدیلیوں کو کم کرنے اور موافقت کے اقدامات شروع کرنے کے لیے ہر ممکن تکنیکی اور غیر تکنیکی مدد فراہم کرنے اورپانی، توانائی، خوراک، صحت اور تعلیم کے شعبے میں تعاون کا یقین دلایا ۔
دریں اثنا، گول میز کے دوران، گیٹس نے صحت، زراعت، ٹیکنالوجی اور موسمیاتی فنانس کے شعبوں میں نجی شعبے کے اہم اختراع کاروں سے بھی بات چیت کی جنہوں نے ملک کو موسمیاتی تبدیلی کے موافق بنانے کے لیے پاکستان کے نجی شعبے کی مختلف کوششوں پر روشنی ڈالی۔

نجی شعبے کے نمائندوں اور گیٹس نے پاکستان کے مختلف سماجی و اقتصادی شعبوں بالخصوص توانائی، پانی، خوراک، صحت اور تعلیم کو درپیش موسمیاتی تبدیلی کے چیلنجوں پر قابو پانے کے لیے تعاون کے امکانات کا بھی جائزہ لیا۔

گیٹس نے پاکستان کی آب و ہوا کی موافقت کے وسیع طریقوں کے کلیدی پہلوؤں اور موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے پیدا ہونے والے مسائل اور چیلنجوں کے سائنس پر مبنی حل کے ذریعے پیش کردہ مواقع کے بارے میں بھی بات کی۔

گول میز کے دوران،  بل گیٹس نے دائرہ کار اور پیمانے دونوں کے مسائل کے لیے مصنوعی ذہانت (اے آئی) کے استعمال اور استعمال کی اہمیت کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے ماحولیاتی خطرات سے نمٹنے میں پاکستان کو درپیش غیر معمولی چیلنجوں کابھی اعتراف کیا۔
انہوں نے ملک میں موسمیاتی موافقت کی کوششوں کی حمایت کے لیے اپنے مضبوط عزم کا اعادہ کیا۔

 

Editor: Kamran Raja