Thursday, June 13

وفاقی دارالحکومت کے 13 تھانوں کی تزین و آرائش شروع کر دی گئی ہے

وفاقی دارالحکومت کے 13 تھانوں کی تزین و آرائش شروع کر دی گئی ہے

وفاقی دارالحکومت کے 13 تھانوں کی تزین و آرائش شروع کر دی گئی ہے

نگران وفاقی وزیر داخلہ ڈاکٹر گوہر اعجاز نے کہا ہے کہ وفاقی دارالحکومت کے 13 تھانوں کی تزین و آرائش شروع کر دی گئی ہے، 30 یوم میں اسلام آباد کے یہ تھانے سٹیٹ آف آرٹ بن جائیں گے ، عوام کے جان و مال کا تحفظ ، امن و امان کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ پولیس کی شناخت کو بھی بہتر بنانے پر توجہ مرکوز کی گئی ہے ،اسلام آباد کے ہسپتالوں کو مثالی بنانے کے ایجنڈے پر عمل پیرا ہیں ، اسلام آباد کے عوام کو وہ سہولیات اور آسانیاں فراہم کریں کریں گے جس کے وہ مستحق ہیں ۔ وہ پیر کو تھانہ گولڑہ کی عمارت کی نئی عمارت کے سنگ بنیاد کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے ۔ آئی جی اسلام آباد پولیس ڈاکٹر اکبر ناصرخان، ڈی آئی جی ، ایس ایس پیز سمیت دیگر اعلی پولیس افسران ،انجمن تاجران کے نمائندوں ور معززین علاقہ بھی اس تقریب میں موجود تھے ۔ نگران وفاقی وزیر داخلہ ڈاکٹر گوہر اعجاز نے کہا کہ وزیراعظم نے مجھے وزارت داخلہ کی امانت سونپی ہے تو پہلے ہی روز آئی جی پولیس اور کمشنر اسلام آباد کے ساتھ ملاقات کر کے ان سے مسائل پوچھے ۔ پولیس حکام سے پوچھا کہ اپنی فورس کو کیا سہولیات فراہم کی گئیں ہیں اور کیسے ان کے حالات بہتر کیے جاسکتے ہیں۔ آئی جی اسلام آباد نے بتایا کہ اسلام آباد کے 26 تھانوں میں سے 13 تھانوں کی حالت ایسی ہے کہ آپکو بطور وزیر داخلہ دورہ بھی نہیں کراسکتا ۔ اس صورتحال پر سیکرٹری داخلہ اور دیگر حکام کو ہدایت دی کہ اسلام آباد کے ان تھانوں کی فوری تزین و آرائش کی جائے جس کے بعد آج پیر سے اسلام آباد کے 13 تھانوں میں تزین و آرائش کا کام شروع ہوجائے گا ۔ ان تھانوں کا چہرہ پنجاب پولیس کے تھانوں جیسا ہوگا ۔ تھانوں کی تزین و آرائش کا کام 30 یوم کی ریکارڈ مدت میں مکمل کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ تھانوں میں پولیس افسران اور جوان 24 گھنٹے گذارتےہیں ،عوام الناس بھی اپنے مسائل کی داد رسی کے لئے تھانوں میں آتی ہے ۔ ہماری کوشش تھی کہ تھانوں کی حالت کو بہتر کر کے پولیس کی شناخت کو عوام کے سامنے مزید نکھارا جائے ۔تھانوں کو ایسا بنانا چاہتے ہیں جیسا کہ عوام کے تصور میں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد کی ہسپتالوں کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے دورہ کیا تو ان کی حالت دیکھ کر رونا آتا ہے ، اس محدود وقت کے اندر اسلام آباد کے پمز اور پولی کلینک ہسپتال کو بھی بہتر بنائوں گا ۔

ایڈیٹر: راجہ کامران